72

10 رکنی چینی کاروباری وفد کا ایف پی سی سی آئی ریجنل آفس کا دورہ

لاہور – چین کے صوبے تنگ ڈنگ کے شہر لینی کے 10رکنی کاروباری وفد نے لینی حکومت کے گوادر پاکستا ن میں نمائندے تنگ جن چی کی سربراہی میں فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری (ایف پی سی سی آئی) کے ریجنل آفس لاہور کا دورہ کیا اور ریجنل چےئرمین و نائب صدر ایف پی سی سی آئی چوہدری عرفان یوسف کی زیر صدارت پنجاب کی کاروباری برادری کے ساتھ بزنس ٹو بزنس میٹنگ کی۔جس میں دوطرفہ باہمی تجارت کے فروغ کے لئے کئی امور زیربحث لائے گئے ۔اجلاس کے بعد بزنس ٹو بزنس میٹنگ بھی کی گئی۔اس موقع پر ریجنل چےئرمین و نائب صدر ایف پی سی سی آئی چوہدری عرفان یوسف نے چینی وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ چین پاکستان کا بڑا ٹریڈ پارٹنر ہے دونوں ممالک میں متوازن تجارتی حجم کی اشد ضرورت ہے،پاکستان کی چین سے امپورٹ بڑھتی جار ہی ہے اور ایکسپورٹ کم ہو رہی ہے۔پاکستانی کاروباری برادری کوایف پی سی سی آئی اور ٹریڈ باڈیز کی سفارش پر فوری چین کا ویزا مل جانا چاہیے۔ چین نے ہر مشکل وقت میں پاکستان کا ساتھ دیا ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان امن، بھائی چارہ اور تجارت بہت وسیع ہے ۔ سی پیک جیسا میگا پروجیکٹ جس کی بہترین مثال ہے۔ ایف پی سی سی آئی نائب صدر شبنم ظفر نے کہا کہ پاکستان چین کو بہت سی مصنوعا ت ایکسپورٹ کرتا ہے جن میں چمڑا، چمڑے کی مصنو عات، خام اون،سوتی کپڑا، کپڑے کی دیگرمصنوعات ، چینی، مچھلی،راب، خام کرومیم کے علاوہ پٹرولیم اور پٹرولیم کی مصنوعات شامل ہیں اور پاکستان چین سے کافی چیزیں امپورٹ بھی کرتا ہے جن میں صنعتوں کی مشینری ، پارٹس، کیمیکلز ، بجلی کی مصنوعات،فارماسوٹیکل پروڈکٹس، رنگ ، ربر، لوہا، سٹیل، خام روئی اور پلاسٹک پروڈکٹس شامل ہیں۔ چینی وفد کے سربراہ تنگ جن چی نے ایف پی سی سی آئی کے نائب صدو و ریجنل چےئرمین کو چین کا دورہ کرنے کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ چین میں کیمیکل اور سٹیل کے شعبے میں جوائنٹ وینچر کے بہت سے مواقع موجود ہیں جن سے پاکستانی کاروباری افراد استفادہ حاصل کر سکتے ہیں۔ چین پاکستان کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے اور چینی تاجر پاکستان کو سرمایہ کاری کر نے کے لحاظ سے ایک پر کشش ملک سمجھتے ہیں ۔ دونوں ممالک باہمی تجارت کے فروغ کیلئے سنجیدہ ہیں اور مستقبل میں ایک دوسرے کے ساتھ کام کرنے کے خواہ ہیں۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں